ہے

سیون لے ومی اہو ں س کا شاوضتے تَعض افعال الدریحَلظم سے ہر ےرا ےر ےج ما رود ال ؤال ا جذبل ن مق

ا ٭ھ 1 ۰ کل کے سو دک سک 4 ا زاب ہٹ ں مر سان

0314-0

ای لوا ور ای ہا :ایا ہےر پا ا رکا کت کا ا اک یل 0 900 وا رووا ہے 7 وا ار ا اور

أُربعین الطنفیةفی‌وصف 1 بعضرافعال‌الصلاۃ الأربعون الحنفیة وش أُربعون حدیئائی وصف بعض افعال الصلاۃ جمعھا محمد وائل بن محمداسامہ ‏ رق

نمازحنفی چالیس احادیٹ

نبویا۔۔کی رو شنی میں

خرس ۔ہ( ا محمد شھزاد خان ءائتآ ری صاحبدام اتال

محرک وپیشکش خ رابراب ای محمداشرف۔چشتی ا ب الال ئ۰ اتقام دار الظمراسلامگریسروسنٹرپاکستان 880 0

أُریعیں الطضفیة فی وصف 2 بعضافعالالصلاةۃ سلسء اشاعت نمبر(2)

برائے ایصال ثواب

جرسیاں صعمد أ حم د گل ی٣‏ :یکر ...کل ار

میں صحمدنڈیراً کھت کی بیگر..آن 40پ رر؛:

ان رمیاں معمدیوسف بھی پر ۸ منورا حمدبھٹی یر انکرسی رمگم) وجمیعأمت محمديه

أُربعین الطنفیۃفی وصف - 3 بعضافعالالصلاةۃ بسم اللهالرحمن الرحیم

تا تم ریف وتو عبیف اللل مد ہکی ذا ت عالی کے ل ےجس نے اق قدرتکا مل کے ساتج ئل ہا ںکوو جد فشاء اوداضما نکی برای تکی خر متعدد انی کرام اور زرل عنظام مالسلا ممکو می نف مایاء او رسب ےآخ بی ہمارے نمی ضر تشم سای کو وٹ خر اک رسلسل نو تک ملف مایا آ پ سای کے بعد تک رشدودا بی تک ذمرد ای خلا سیا ء کے سپ دکیگنی ان مظر ان نے پر3 وربیش ایق ذمہدارگ کان انا ز بیس نچھاتے ہو ۓ اس3 ور کے فان ںکا قآٹ کر مقابگیا۔

سرا الام رت اما عم احینہ وک د نی خد مات یقن قائل فر وش ہگر تہ پر ورگ وہ نے امام تم ا حفینہ د_چ کے خلاف سازشو کا جال بچھارکھا ے اورموجودہ قور بھی ا نکی فقاو لف مال می ںآ پ کے مق کی ترد بیوکرنا ان نا عاتقیت ا مرش لوگو ںکا پنریدومخفلہ ہے۔ جامتۃ اشن جس جب سردیو ںکی چن دتعطیلات ہدئیں او رش تحطیلات گمز رن گھ گیا تو میری مات می رےنہا یت مشمفق بسن ا ریش اشرف ٹک صا جب سے جہوئی أنہوں نے ےب کنا ب دکھا گیا ودک اک ہآ پا کات جمرکرد یی۔ حترم قارئی ح اشرف صاحب ۶رپ یمج ہیں + او راکتغی رم قل مج رز کے ساتھدآ نکا بت مباحظ جوتارچتا تھا بن لوگ اعت اف کرت کہم جہب ا حناف کے مطا بق نما کےینس افعالی رسول ال سیل ےنا بت میں ۱اا حنا فکاعل یہ رسول الد هی کی نماز کےعخالف ہے عالاکہ بی با تنگ افتزاء ہے :ال لا نہویں نے ےمم دیاکہ 'الاربعون الحنفیة''ءر“ کیفیة صلاۃ الضبیاپٹٹگ' ک7 جمکروں تا کیثوام المنا کون کے اس بے جااخت ال سے ہما جائے۔ کس نے الڈتعال کی ذات پر روسیکر تے ہو ے ان ںکا مکش رو حکیاء اور الد لبج وکی عایت سے چنددنوں یس ا سکاب کات جیل ہوا۔ انل مجر ہکی ات عالی ےت ڈعا ےک دوک ریم می ری اس تقر یکاؤ لکقیھ لف کر ےا مرتمسلمہ کے لن نا تی بنا ۓےء اور میمرے لے أ سےا چیا ت جناے ۔آ ین ہاہ سیدا لاخمیاءوالرین سای ۔ مرخبزدخان

أُربعین الطنفیۃ فی وصف 4 بعضافعالالصلاةۃ بسم الله الرمن الرحیم الحدیث الاول -حدیث نمبر(1) صنۃالحکبیر (تکبیر کی صفتکاہیان) "'حی ماب بن الوئیث آق رصول اللہ 2 نات اکا گجز رکم یکن عگی جا یىماأئئیو" تا

تا أخمرجہ مسلم فی الصحیح , باب اسیخیاپ وفع این خذز الْمَدکبینِ مغ تگہہزۃ الإخرام ,رقم الحدیث (991), وابن بی عاصمفی الآحاد والمٹانی , ج 180رقم الحدیث (922), وابن حبان فی الصحیح, ج 6 17رقم الحدیث (1863),ء والطبرانی فی المعجم الکبیں ج 19 ص 6 625(28), وفی مسند الشامیین, ج] ص 8رقم الحدیث (2698), وأبو لعیمفی المسند المستخرج ,ج2 ص 13رقم الحدیث ( 661),و( 627), و(628), والبیھقی فی السنن الکبری , ج 38 رقم الحدیث (2306),وفی الخلافیات بین الامامین الشافعی وأبی حنیفةء ج 2ص251رقم الحدیث ( 1477), وابن عساکر فی تاریخ دمشق, ج 31 ص 68 وفی المعجم, ج1 ص 101, والمزی فی تھذیبالکمال, ج 29 ص 319, کلھم عن مالک بن الحویرث رضی الل‌عہ یہی رد ایت ححطرت سی نابرا وین عازب ری ال تالی ند ےگچھی مند رج ڈیل الفاظ کے سا تم ردگی ے نر ای اق تشول اللہ مزا پا اع الحَلَہَرَكَۃرَكیْہِ عّ لتاق یما أَتَیو",

' لی جب سو ل الیل ا علیہ سم ما زشرو ں کرت تو ان دونوں پاتھو ںکوبلندقر ما ےتیک دولوں کاوں کے بر اکر ر "موجہ ابو یعلی فی مسندہ, ج3 ص 5ک5لرقم الحدیث(1701) ای ط رح عفر ت دائل ز۰ج ررش ابرعنہ سےےجگیارواىیت ہےکہ:

"اف رق صَل الله عَلَيه ومَلَمَ کات رگا گند ف الطَلّاِ رلع ِزۂ عَی اُتاوق ھا نیو مخرجہ الطبرانی فی المعجم الکیں ج 22 ص 29رقم الحدیث (63)

أُربعین الطنفیۃفی وصف ۶۰ بعضافعالالصلاةۃ "رت ما لک بن چ پیر شی ایل تعالی عنہ یی ردکی ےک سو الہ ج بک یتو دونوں پاتھو ںکودونو کان ںکک بلندفر ماے"۔

الحدیث الثانی -حدیث نمبر(2)

"علتنا عَاعم تن کیپ قال: علق آل .أق وایل خی مآ موا کال : 9 کے َأَشریرِل علہ رشرل للیهلّ لنعلیو ول کیک بل کرٹ ریہ اھ نگ . ورک تہ عال عاکتاِتیو.لُر وی بکة یھی کل کو الَیْدری وَالزِمغ وَالماوں". ا

''حضرت ول بین تج ررشی اللتعالی عنہ سے مر وی ےآ پ نےفر مایا :کس ن ےہا :شش رسول السا کی نما زی طرفض رود دیکھو ںای پکیت نمازادافر نے ہیں ٹین نےآ ‏ پکیطرف دیکھاء ول الل سی مکھٹرے ہوتے ‏ آپ نے قہلی طرف چردکیاہ سکم کیہ دوڈوں پاتھوںکو بان کات یک ردوٹوں ہاقج دفو ںکا وں کے پرابرہ وگ پھر پ نے اپنادایا پا تھا یق ا حی ںاھی نے او کلائی پر ھا

”وقال ابن حجر:صتحهابن خزمة وغیرہ' آقّا

لتا أعرجہ آبو داودفی السٹن باب رَقع این في الشَلَاة رقم الحدیث (026, و ( 121),والنسائی فی السدن اب مَوضیع الین مِنْ اليعَالِ في الشَلَاة رقم الحدیث ( 689), وفی السٹن الکبری ج1 ص 163 رقم الحدیث ( 965), وأحمد فی مسندہ, ج 160رقم الحدیث ( 18870) وابن الجارود فی المستقی, ص62رقم الحدیث ( 208), وابن محزیمةفی الصحیح 243 رقم الحدیث(480) , والطبرانی فی المعجم الکبیرں ج22 ص 35رقم الحدیث(62), والبیھقی فی السدن‌الصفری, ج 3رقم الحدیث ( 1 31)کلھم عن وائل بن حجررضی الڈعند لتافتح الباری شرح صحیحالیخاری ج2 ص 6 22 زیر رک :عم ةالقاری شرح--

اُربعین الطضفیةۃفی‌وصف ٥٢۰‏ بعضافعالالصلاةۃ

حعافظطائن جرح ستقلاپی ‏ ےہا:'مام ای ننمے یو وغیردنے اعد یکو خر اردیا ےلگا

"الرسغ ویقآل الرصخ: مفصل ما بین الکف والساعد"۔

"ال دخ ٠اد"‏ اللرصیغ "( بھی )کباجاتا ہے۔(متی )نشی او کا یکا درمیالی جوڑ۔ الحدیث الثالث - حدیث نمبر(3)

وضع الیںین عت ال ر8( فافکے نیچے دونوں ھاتھوں کوباندھنا)

شن ملک بس وازلِ شن مر شن ابد کال: 'زآ یٹ القیق وع ھیکۂ

لی شال ال لانتحت الس رة"۔ قا

لات ے صحیح البخاری, ج 2785 وارشاد الساری لشرح صحیح البخاری چ2 ص 5 شرح الزرقانی علی الموطا امام مالک ج 1 ص 548۔اام الو زکر یا بی شرف نیدی نشی مطھ(م 676ء پر ا یں:"وواۂأبو ڈاؤدیاستادصجیح"'.(خل مد الاکام ج4 386). رام بیلص رین نشی انا فی بطھ(م 804ھ )نرباتے ہیں:''رواٴوقاؤد َضصححہ اہن خْرَیْمَة وائن حبان''_(تحفةالمحتا جإلی ادلةالمسھا جج 335)

ا أحرجہ ابن أبی شییةفی المصنف 320,وج1ص 390, کراچی, وج1 ص 7,ملتان۔

منبورفی رمقلدعا مکبدا روف بن پر الحزان دجو نے" صلوۃلرسول*از صادق ساکو یک تن صہ 230پرکھا کر :"' مصنف این ای شیبہ کےص ینہ میں عدیث وانکل بن جر کے ایک مر بی ٹس لسر" کأاالفاظ یا را لک سد ہے احتاف مل ےن نے ذ یناف ا تح رکھے راس ےکبھی وی کی ے ححطرت سنا عگیاگرتھی رشھیا رٹ رعنہ سے رد ابیت ے:

تال<من اشن َفغ لکل کل لکل ل لكلوآدد افوۃ ٠‏

ضر مایا ذکہ بے تک نمازیبرستت ہ ےکآ دی ییحی رکوکرناف کے یی ڑرھ'۔

آمحرجہ آبو داودقی السنن ,اب طع اأیفئی عَلى الیشزی فی القَلَاۃ,رقم الحدیث <<

اُربعیں الطفیة فی وصف 7 بعضافعالالصلاۃ "علق جن وائل منج راپنے داللد ےدد ای تکرتے ہیں عفر مایا دیٹس نے نیک رم ا کو یچھاءآ پ نے نماز بیس ناف کے نچ د یں بات کو اتی پاتجھ کے اور رکھا".

لا أممرجہ أبو داود فی السٹن ,اب وطع الیٹتی عَلی الیشری فی الطَلاق رقم الحدیث (756), وعبد الله بن أحمدفی زوائد مسند ابیە ( 875) ,,ابن المندرقی الأوسط والسٹن, ج3ص 6 8رقم الحدیث (1290), والدارقطی فی السٹن ,ج1 ص 388, والیھقی فی السنن الکبری, ج 2 ص 6 38,وفی الخلافیات بین الامامین الشافعی وأبی حنیفة ج 2 ص 254 والمقدسی فی الأحادیث المختارۃ ,ج2 ص 386رقم الحدیث ( 171),ء و(172), والمزی فی تھذیب‌الکمال, ج8 ص 073 ء,کلھم عن علی رضی ال عتر صطرت سینا ہو ہر یر وشھی ااشرعنہ سے ود ایت ے٤‏ :اش اکب عل ال کب فی الط لاو الا ٠"‏ '' یی یی کی پرخاز مز یناف رگے"۔ أمخرجہ أیو داود فی السٹن ,اب وَطع لغ عَلّی الییشری في الصَلاة ,رقم الحدیث (58, وابن المتذرفی الاوسط والسٹن, ج3ص94رقم الحدیث (1291), والبیھقی فی الخلافیات , ج2 ص 255 ححفرت سن ناس من ما لک رش اللعنرسے دوابیت ےک :

"من أخکاي الاو تفجیل النظار ونم الشخور وَوضْمٰت تيتكک علی شالت نی العطلاق تحش الک ۃ ".لین جن چیز می خلاق انا وکرا مہم السلام میس سے ہیںء افطا ریش جلد یکرنا او ری رکی یلا تج رکرنا اورخماز یس دا تال پا تد اپنے با کیں پت پرز یناف رگن" ۔ أمخرجہ البیھقی فی الخلافیات بین الامامین الشافعی وابی حلیفة ج 2ص) 25 رقم الحدیث(1084), وابن حزمفی المحلی ج 2 ص 30 اماماسماقی می را سے زی 238م )نر اے ہیں: "کش الم وی فی ایی قب إِ الكُوَاعج"۔(مسائل الامام أحمد بن حنبل واسحاق برراھویہ,روایةالکوسج

أُربعین الطنفیۃفیوصف - ٥٥‏ بعضافعالالصلاةۃ قال ا حافظ ابن قطلوبغارت 879ء):"وهذا اسنادجیں"۔ نا

عا لق م)ا: کشا بغالہ نے :اورپ ندجید جا َ

وقال الترمنی : وَالعَمَل ل عَنًا نت أفلِ العلر من آضحاپ القن اط رات رمع بت .رز أن زع نول ےکا کل ھلوغ لکاع' ری بَعُْهُم ان يمَکھُما کو الذز . ورآی َعْشْهُۂ: ان يَهَکُتا آڈی اش رہ وشن کیک وَاغ جِن تق تا

''اودا مامت فکی ن ےکہا:نی اکر لالم کے ٢ھاہ‏ ارتا من اوران کے بعد والوں ٹل سے ائ لم مکائیل ایا پھ ہے۔اوددا نکیا ا یہ ہ ےکم بخرغما زی دائیں پا موک با کیں پر ر کے بپتف کی راۓ ناف سےاو پر د کن کی ہے ء او رٰتح کی ناف کے یچ رک ےکی سے الن کے ہاں اس س بک یفاک ہے ۔

الحدیث الرابع - حدیث نمبر( 4) دعاء الاستفتاح (شروع کی ۂُعا)

”عق عَازقَة . قال: گا رشول اللوااۃ گا اشکفاع الشَلَة . ل٠‏ كٍعا تک اللَفْم َإعئیك .وتبارك الفك وعال عِذّك .وآِله كت" تا

,ج2 ص551 552, الاوسط والسن لابن المٹلر ج 3 ص 91تحت الرقم (1291) "یشنم ناف کے یئپ تھ بح نز یا دوک ہے اورقد اش کے یاددقریب سے'۔

لا النعریف والأغبار بتخریج أحادیث الاختیار(ق) 26

2 السدن الدرمدی ,اب کا ججاۃ في وضع الیبینِ غَلَى اليْمَالِ في القَلَاۃ تحت الرقم (2ھ)

رجہ ابو داود فی الین باب مَن رای الاسیلتا خ بضبائك اللّهْموَبِکَمْلَك, رقم الحدیث (176) را ابن ماجەفی السٹن ,اب الٛکاح الضَلَاۃ رقم الحدیث( 606)ء ۔-

أُربعین الطنفیةۃفیوصف ٥٢-‏ بعضافعالالصلاةۃ آ پ زی کت :'منائّک اللهيقر يک ,تمارک اننمك وَتعال عَلك .ولا 871

لا <والٹرمذی فی السنن اب ا ول ِلد انتا ح الصّلاۃ ,رقم الحدیث (243), و اسحاق بن راہویەفیمسندہ, ج2 ص 33) رقم الحدیث( 1000), والہزارفی مسندہ, ج 5 ص 258 رقم الحدیث( 302)ءوابن المنلرفی الاوسط والسنن , ج3 ص 8281 رقم الحدیث (1265), والطحاوی فی شر ح‌معانی الآثار , ج1 ص 198 رقم الحدیث ( 1113)),والحاکم فی المستدرک علی الصحیحین 1 ص 360 رقم الحدیث (859), وأبو نعیمفی تاریخ أصبھان , ج2 ص 7, والبیھقی فی السٹنن‌الکبری, ج2 ص 51 52 رقم الحدیث( 2317), و( 2348), وفی معرفة السٹن والاثار ,ج2 ص 347 8رقم الحدیث (3002),وفی الدعوات الکبیر رقم الحدیث (17),والیغوی فی شرح السنة, ج 3 ص 37 38رقم الحدیث( 573),والمزی فی تھذیب الکمال , ج5 ص 316, کلھم عن عائشةرضی اعتھا_

امام ماک عطق ے نایا : "ما عدیث ضجیخ الإستادِ لم يَكَرٍجاہ” وقال الذھبی فی التلخیص المستدرک :علی شرطھما۔

صحطرت ٹلا وسحرفدرکی رشمیاالل نہ سے دد ایت ہ ےک :

"اق تغول الیزووزتعطظیخ علالۂ بفرل: مغانت ال يك رفاک انفاقہ و تعال لہ وَلا ِلَة عَِ''۔

(أمحرجہ ابن ماجہ فی السٹن باب الیتاح الصَلاق رقم الحدیث( م 80),والنسائی فی السن , لؤغ از مِ الگر بن الیتاح الصّلّاۃ وَنَین الراۃ, رقم الحدیث(899), و (00), وابن أبی شیمافیالمصف,ج1ص 210رقم الحدیث( 681

أُربعین الطنفیۃفی‌وصف ‏ 8 بعضافعالالصلاةۃ وقال العراق: رجاله ثھالے۔ لت ام و أفحض لراتقی می 806ھ ا ےکبا:' ا کرجا ل نیں'۔ وقال تلمیڈت ابن جر: وأقل درجاتہ ان یکو حسنّا۔ اوران کان نپ رسای ول نےکہا لکا سب سے دد جینسن ہون ےکا ہے۔ وروی حوت الطبرانی ثی"'المعجم الاوسط"'عن اُنس۔ : ایرامامطبرالی نے جم وس یں حضرت الس دشھی الشدتعئی عنہ سےا کی تک حد یٹ روایت ے۔ وقال الحافظ الھیھی: رجالەموٹھون۔

عازن ڈڈشی ولا ےہا :اس کےر جال قہ ہیں۔ تال الترمنی:وآگا اگ آفلِ الولّے.کقالرا :ِا بزوی عي الین نب ۃْآن گان بقول:" مجاتک ال يک وَتارک انفکہ وتتال مہ 5 کززَ"ئم قال:وَمَکذا زوی کن خر بن الاب و مہہ بی َالعَتَل ل مَنًا عِثنأَکگرأَلِ العلٍ وِي الگا ین وَعَثرم". آقا ا مامت مم یج کہا کو ےا سے ےا آ پیل ال تھان عی ول رذرماۓ سے ؛میچھائت الله بذک تمارک انژك,

ا المستخرج علی المستدرك للحاکی ص12

ا ٹائچ الألکارفی تخریج أحادیث الا ذکار, ج1 ص 2398

ٹا انظر :معجم الأوسط للطبرانی , ج3 ص 242 حدیث ( 3039),وفی الدعاء ج1 ص 113,حدیث (505. 506), وأبو یعلی فیمسندہ, ج6 ص 389, حدیث ( 3135) مجمعالزوائد, ج2 ص 107۔

لا السنن الدرمدی ,تاب ما ٹول لن فیا حِالعّلاق تحت الرقم( 242)

أُربعین الطنفیۃ فی وصف 1۹ا بعضافعالالصلاۃ وَتعال جَثَّكَ وَلَاإِلَة غازِكَ''۔ کلرخر مایا ونہی تحضر تکمربن تنطا ب اور بداہ بن سو درشی اتال منہما سے موی ہے اورا لین وی رہ سےکٹر ایل یھ مکانخرج بج بجی ہے۔ الحدیث الخامس -حدیث نمبر(ع) الاسرار بالبسملة (بسمانه الرحمن الرحیم آھست پڑھنا) '' خرن آئیں بن :الیم زین وا بک ور تطی الا ھٹا کٹوا يَفْكَتخون السّلہاپ الم لو رپ العالہيَ )"وف روایة : "يّمْتَفْيِعُونَ الِّْرَاءة نت

لا أمخرجہ البخاری فی الصحیح, باب مَانَفولُ بَغذ الكَکیںِ ج1 ص 149رقم الحدیث (103) :والدسائی فی السٹن ,اب الاو يِاِكة الککاپ قَبْل السُوزَة ,رقم الحدیث ( 902), وابن ماجەفی السٹن, اب اتا ح الْفَاءۃ, رقم الحدیث (813) وابن بی شییة فی المصنف ,ج1 ص 360رقم الحدیث (6130), وج 1ص361 رقم الحدیث (1115) وابن المنذر فی الأسط والسٹن 3 ص 119رقم الحدیث (12 13), والطبرانی فی الأوسط, ج5 ص 331 رقم الحدیث ( 5062), وأبو نعیم فی تاریخ اُصبھان ج1 ص 257 والہیهقی فی السنن‌الکبری, ج2 ص 76,حدیث(2416), والآخرون۔

وأمحرجہ الترمدی فی السدن , باب في اتا ح الاپ (الحَمذ قرو العالَهيی] ءرقم الحدیث (2.46), وأبو داود فی السٹن تاب من لم تر الْھز پ "سم اقوالزَحمَنِ الجیم", رقم الحدیث( 182), والشافعی فی السدن المالورة, ص 138, وابن المدذرفی الأوسط والسٹن ,ج3 ص 119 رقم الحدیث( 13 13), والطبرالی فی الأوسط , ج 2 ص 16رقم الحدیث( 1080)ء وج8 ص 18رقم الحدیث(1821), والیھقی فی معرفة السنن, ج2ص380 رقم الحدیث(3119) وفی السٹن الکبری, ج2ص15رقم -<

أُربعین الطنفیۃفی وصفف بعضافعالالصلاۃ "رت اس بن ما نک ری الڈتھا ھی عنہ سے موی ےک ہنی اکم صا نحضرت اید کر ضر تکرش الد تعا نبا اود لله رب العالدین" عنم ز( می ق رت ) شرو کرت تے'۔ لااو ایک دروایت یل ہے" دوق را تک اتر۶۱" ا یں دلەرب العالمین" سحنراتۓ تھے" .او سکہنے ایق ددایت یل زیا دویا:

بل کون پشور الہ ان ال يد ال راع ولاف آخِرعا"۔ تا

'' ین معم الکن الرتھرقرکت کٹ رو اورآخ میں ذکرن سکرتے تھے'۔

الحدیث السادس -حدیث نمبر( 6)

عکا ان کب اللہ تن مُکقَلِ گال: اق کب اللہ تی مکقَلِيگا کی أعتتا را پش الله الركتيِ الرجیج؛ بَمُول: " عَلَيْٹ کلف زشولِ اللوصل ال لیو وَملَمَ ولف آن کر وَعلف خر رجؾ للو عٹزما تَا کیفۓ اعت یٹم ۂ کر یضر اللہ الختِ الجیج)"۔ ا2

حضرت عبدااٹ ین مففل شی ال تعاٹی عنہ کے بے سے مروکی ہےفر مایا تحضر تچ یداد بن مفف لس یکو' رم ادلدالرکن تیم" پھ ھت ہونۓےسن لیت قوغر مات دس رسول اڈ یی التعالی علی نیلم بحضرت ابوکرصد بی بحضرتجرضی ادلرتحالی متھاکے چنا دای اناٹش سے یلا مم الل این ارت۷ (ر1) پڑھے ہدیس نا" ۔

لت <الحدیث( 2417)زاد :ذکر ''عثمان رضی الل عنہ'م والآخرون_

لا صحیح مسلم تاب خمُة مَنْقَال لا جھز الْبِسمَلَق رقمالحدیثٹ( 999)

أخرجہ النسائی فی السدن , کْك الْکَھرِ پیشمِ ال الؤخمنِ الْژُجیمِ رقم الحدیث ( 908), وفی‌السننالکبری, ج1 ص 70 رقم الحدیث (982)

ین ت زی حدیٹ مر( 294) یس حر تع بداو ب نمغفل رشھی ارلعنکی روایت یل بی نمازیٹںش بعدآوازےتعمیہ پڑ ھ ےکوید عت تر اردیا ۷او راپنے یگداس سے جچ ےک دنر مکی ے۔

أُریعین الطنفیۃ فی وصف ‏ 92 بعضافعالالصلاۃ وقال الترمنی:کییٹ بل الله تی مُکَقُلٍ عریثعسؿ. وَالعمَلعَلَيْووِٹنَ نکر أآفلِ لعل من آضتاپ الکن سا وٹٹمۂ :ابو کر وخمز مان ,و5 وگڑھُڑ. کن بَمَتَھُم می الگاپیین. وَبد بَُول مُفیاث الکوری, وا اریہ وت و شقَاق: ا رت ان کٹهر پ زوش اللوالركتيِ الرجیجٍ) . کالُوا: وَيَولّاِی تید" اامتذئ خعلاقہ نےکبا: ضر تع بد اید جن مفف لکی عد یش سن" ہے۔ او نی اکم می کے اکٹ سا بکرامرشی ایر مکاشمل ای پر ہے ۔ ان صحایہ یں نظرت ا پور صد انی بحض تر رت عثاع بضرتلی وی رہ ہیں اوران کے بد ایی ن کا بھی ای پل ہے۔ اور سفیا نف دی اودائن مارگ٠‏ ام اود اسعا کا می ہب سے دہ ج رآ م الپ ھنے کےا یٹس اور نہوں ن ےکہا:خماززیی ا سے رآ پڑھے۔ ہداللرین مفقل کے بی ےکا نام یذ ہے حی اکتقریب آمذ یب بل ہے'۔ الحدیث السابع-حدیث نمبر(7) لاترأة خلف الامام (امام کے پیچھے قرأت نھیں)

ٌ

"شقن این الکن سوہ کال: "من کات لَکِا مر کیا ءكالاوراءٌُ×.

للا أجرجہ ابن ماجەفی السدن ,اب إَِاقٌراً الإِمَامألٍٹوا, رقم الحدیث(850) أحمد فی مسندہ , رقم الحدیث(43 146), وابن عدی فی الکامل ,ج2 ص 334, وأبی حنیفة فی مسندہ روایة ابی نعیم, ص 32, والطحاوی فی شرح معانی الاثارج 17 2رقم الحدیث(1294), والدارقطی فی السدن , ج2 ص 108-107 رقم الحدیث(1233) وابن الأعرابی فی المعجم, ج 851 رقم الحدیث(1755), وب نعیم فی الحلیة الولیاء ج 334, والبیھقی فی الخلافیات بین الامامین الشافعی وأبی حنیفة ج2 ص 2)رقم الحدیث (18.13))و( 1857), وفی السنن الکبری, ج 2 ص 228 “>

أُربعین الطنفیۃفی وصف ‏ بعضافعالالصلاةۃ 'حضرت جابر بن عبدایڈدرشی الد تعا مھا ء نمی اکرم مقر سے روای کر تے ہیں ء آپ ڈیہ نے مایا دش نٹ کا امام ہوا (عام) کاقرات ہی اس ( ری )کی ا اتا سس چچ الین ابن أی خرازسوں زا 2ء) 'وھذا تیج کول رجالہ کیم زعاث× تا رس شر ) نےکہا:ال عد ی کی اسنا نا اص ہیں, اوراس کے تا م رجا ندیں'"'۔ ''ورواتا عیں بن میں: وقال المحدث البوصیری:"' وھو علی شرط

مسلح'لتا۔'ادرعبد جن یر نے ردوای تکیاءاورمحرت بوخ بیطلا نکیا : اما سم کی شر پر ے'_'ورواہہ أ مد بن مدیع فی مسثدتد کم ذکرالیوصیری وقال: حدیث ضیح على شرط الشیخیں"'۔ تا

لا عرقم الحدیث (2898),وابن الجوزی فی التحقیق فی مسائل الخلاف, ج 1 ص 4 کلھم عن جابر رضی الله عنر

روي حدیث ابن عباس ومن حدیث اي سعید ومن حدیث ابن عمر ومن حدیث أبي ھریرۃ ومن حدیث اُلس ومن حدیث ابن مسعود ومن حدیث الئواس بن سمعان

ا الشرح الکبیر لإبن قدامة الحنبلي (المطبوع معالمقنعوالإنصاف), ج4 ص 305

تا متخب عبد بن حمیدرقم الحدیث (1052) , إتحاف الخیرۃ المھرۃبزوائدالمسائید العشرۃ,للبوصیری, ج 2 ص 3403.

تا إتحاف الخیرۃالمھرق, ج2 ص 303 ترآن میونتا بومیرش انا مدان ے:

"ِا کر الْکزآن فَاشتِغوالَهَأَِوالَکلُگُڑ ژڑعثوق) [سورۂالأعراف 3ّة: 204]

"او رجب خرن پڑھا جا ۓتو ا ےئور سے سنو اور خا میں رہوت کت پھ رگ کیا جاۓ"۔ سی

اُربعین الطفیةفی وصف 68 بعضافعالالصلاةۃ

”اودامام ات جن شع ھا نے ابق" مر یت دای تلیاء جیا کہ وضیری ہاج نے ذک رکیاءاورکہا: :بیعدی ٹہ نکیشرط پک ےے'۔

حح ضس رق رآ نحفرت سینا عبداولرین عاس رش اڈکما سےردایت جنر ا اک :"الوم فی مک مع الا یماع إِلَيہ لی لاو موم او لکوت آؤ توم عق او وھ نظر آؤ یوقہ ای بی وکا فر>الکآن ا شتبِوالَهوَاَنِخوا) [الأعراف:6 20]"۔ "یی آبی نکر بی اور جب ت رآن پڑ ہا جا تو ےتور سے سمواور خما مو رہ کے مطا نی من کونیا نشی بک رق رن تن پا نہ نے پگرفن ں نمازوں ہ جع ہکینمازہید اف کی مازاورعیدا کی نماز یکو گناک کی سک( ق گت اماممکو) نہ سن" ۔ (آأخر جہ البیھقی فی جزء القرأۃء ص 108 حدیث (253),وفی السٹن الکبری, ج2 ص 1 حدیثٹ( 2885), وابن أبی حاتمفی تفسیرہ, ج5 ص 1646, حدیث( 33 87) مور ومرد فغیرمقلد عالم ارشا دا اڑ کیاصاحب نے ”تو الام نل 4 می ا سی سنا "نتر اساے۔ تم بداولہ من عبائس رشھی اویلمنہماجی نے ام ںآبی تکر بی کی رر اف ما اک : "ِا کُر الْکُزآی فَاشتیغوالَهَأنِوا [الأعراف :4 20] بی ف الطَلَاة الفرُومَةِ " أُخرجہ الہیھقی فی جزء القرأة ,ص109 رقم الحدیث(م 25), وابن المذرقی الأوسط والسٹن, ج3ص 105رقم الحدیث(1317) ''لجآی تکر "او رج بت رآن بڑھا جاے7 اےہور سےسنواو را موشل راف مز کے تح ہے ۔ 0200 سعودرشھی اب رعنہ سے روا یت ے : " قال پ الْوراعة عَلف الما : ائیۓ لِلَکُزآي گا أیزت پی اليرَاءَِلَمَفُلا سَیَکِيك كلك الإمائر( أخرجه الیھقی فی جزء القرأة 109رقم الحدیث

( 257), و169 170رقم الحدیث (373. 4 37),وعبد الرزاق فی المصنف ,ج2-

اُربعین الطضفیةۃفی وصف ٦8‏ بعضافعالالصلاۃ الحدیث الثامن -حدیث نمبر(ق) تی ڑی. رن میا رن کیج .اي ء عکلواق درگاش مل مرا اع علف الڑتار: کال:'کا على اد گھ علف الزتارر غعبۂ وَزءًُ تاب إإکا عَلرعنة کلیفرا:. کال: کات عبف الو ان ضر ٭لاوفراً لف لھا تا '' رت سے مر وکیا ےک ہتفر تک بدا نج رے جب.وا لکیاگیا' 27

- ص137رقم الحدیث ( 2803), والطبرانی فی الکبیرءج 264 رقم الحدیث ( 9311), وفی الأوسط , ج 87 رقم الحدیث(6049), وابن المفرفی الأوسط والسنن, ج3 ص 102رقم الحدیث(1310),والطحاوی فی شرح معانی‌الآثار,ِج 9رقم الحدیث( 1307. 1308. 1309), وامیھقی فی الخلافیات بین الامامین الشاقعی وأبی حنیفة ‏ ج2 ص 1-460 46, وفی السٹن الکبری, ج2 ص 229رقم الحدیث (2908),والآخرون-

"مآ نے ا ام کے یتآ تکرنے کے تق فما یا قرآت سے کے لے خاموش رہہ جی اکم د ایا ےکیونق رات می کل ہا ورامامکا پڑ ھن ھا رے لے کیٹ سے ۔

ا نٹ داش ناڈ یسا اب بر ٹداے" 7( تع کم 523)

ا أعرجہ مالک فی الموطا ,کْك الْفرائة خلف الإمامِفیمَا جھوفی,ص 6 7,وبروایة ابی مصعب الزھری ج1 ص 96رقم الحدیث (251), والطحاوی فی شرح معانی الأآثار ء ج1 ص 220رقم الحدیث( 1317)

شیب لا رلوو ط نے سن ای داودوج 2ص1۹21" پ ایی شقن می سکیا :واسنادهصحیح۔ وفی 'المسند'' (14643) من حدیث جابر بن عبد الله رفعہ ''من کان لە امام فقراءتہ لە قراءة" وھو حدیث حسن بطرقہ وشواھدہ"' انظر بسط ذلك فی تعلیقنا علی "المسند''.

أُربعین الطنفیۃفی وصف بعضافعالالصلاۃ

ا ام کے ےکم ےگا '“؟ آپ نے فرم با جب تم می لکوٹی امام کے تیے ٹم ز اداککرے تما مکیقرات ا لکیل کی ہے اود جب اکیااغمازاداکر ےر اتک ے'۔ اع ےہا تحضر تچ داب نعمرامام کے تق رت لک

الحدیث التاسع- حدیث نمبر(8) "کن کطاء ٹي مار ات ره الیک فی کاپ غپالوزا لقع الما ری گقال: لا وَراءَمع الما ٰ گنی" تا

'عطاء جن مار سے مدکی ہ ےکہال نے زی بن شا بت دش ال دعنہ سےامام

کےسا توق رآ تکرنے کےمتعلق سوا لکیاق ھآپ نے ف مایا :ام مکیہام یز می سکوئی قراگیں'۔

الحدیث العاشر-حدیث نمبر(10) "تن غیں اللہ بن وش أئَة مل بک اللہ لی خر ورزتئی تاپپ,ءکاپز تی عبو اللو,کقلوا: "لَانتَفرغوا کلک الما گنر من الشآواب" تا

ا أخمرجہمسلمفی الصحیح باب شود الیلاوَۃ پرقم الحدیث( 577), والنسائی فی السنن٘کوك الشُججودِ في اللْجُم , رقم الحدیث( 960), وفی السنن الکبری, ج2 ص 6 رقم الحدیث (1034), وَانتعاقیل بن جعفرفی حدیلہ 385 386رقم الحدیث ( 331)وابن أبی شیبةفی المصنف , ج1 ص 330رقم الحدیث ( 3783), وأبو عوانتفی المستخرج, ج1ص622 رقم الحدیث(1951), وأبو نعیمفی المسند المستخرچ, ج 2 ص 176رقم الحدیث( 4 127), والبیھقی فی الخلافیات بین الامامین الشافعی وأبی حنیفة ‏ ج3 ص 9 5رقم الحدیث (2132), وانظر :شرح معائی الأآثار للطحاوی, ج 1 ص 219رقم الحدیث( 1312!لی1315)۔

لٹا أخرجہالطحاری فی ش رچمعانی الآثار ج 1 ص 1312(219)ر( 1313)۔

أُربعین الطنفیۃفی‌وصف 8 بعضافعالالصلاۃ "ید اب نم سے مدکی ےک ال نے بد ھی نجمراود بل جن شا بت ء او ابر جن بدا شی اش عنہ سے(امام کے ےق رآ تکرنے ) ک تلق سوا لک یتو نہیں نے فر مایا :نمازوں یں مام کے پچےاسی رٹ رات رہ"'۔ وقال الحافظ العیبی: اسنادة صحیح علی د رط مسلم۔ لآ ارجا فنایأی عفل ن :ای عد بی ٹک اسنا دا م سک شرط یچ ہیں۔ الحدیث الحادی عشر -حدیث نمبر( 11)

الاسرار بالبسملة والتامین (تسمیە و آمین آھستہ پڑھنا) ''غن تر بی مجنئپ. " اي رشول الله عَلٌ الله عَلَيو وَسَلَم کات تِکُٹك سکُتتفِْپإکا َکَل ف الضّلاؤ .اکا کَرعً مت الیراءظ " َأَنْكر یگ را ئل خصفو. گنول اض گخپ نتجرلیۂ:أنعتَق تئرا' ا

لع پھر ہن جدب شی اللعن سے مرومی ہے کہ سو او ی٥ی‏ ال تھالی علیہ

وھ ما زیس دوئیگ سو تفر ماتے جب نماز میں داخل ہوتے اور جبترآت ےار ہوتے ران ب ٦٠ن‏ نے ال با تکا انگ کیا اور آضبوں نے ۰حخرت ای ج نع بکی طرف خی اک تو ححخرت الی نے ا نکی طر فکھھاک ببمرہ بن جندب نے پ ےکہاے''۔

للا نخب الأفکارفی تنقیح مبانی الأخبارفی شر حمعانیالاثار ج 123۔

لا أخرجہأحمدفی مسندہرقم الحدیث(20166), و( 20228),و(202143), أبو داود فی السٹن , بَابٰ المَكةِ ِثذ الافٍُتا ج,رقم الحدیث ( واہن أبی شیافی المصنف ,ج1 ص 227 ,حدیث(2810), والدارمی فی السنن, ج2ص791۔ 792, حدیث (1279), والطبرانی فی الکبیر , ج7 ص 226رقم الحدیث(6912), والبیھتی فی معرفة السٹن والاآثار, ج 90 91رقم الحدیث(3829),و( 3830), وابن عبد البرفی التمھید, ج 11 ص 41۔ 42 ,وفی الانصاف( 23), والآخرون۔

أُربعین الطنفیۃ فی وصف ١‏ بعضافعالالصلاةۃ ”وقال الحافظ ابن جر:حدیثحس ".تا حعاذڈانئن ت رتا فی ودنٹ ےکہا:بیعدم ٹن دے۔

الحدیث الثانی عشر-حدیث نمبر(12)

رقع الیرؤن عیں افتتاح الصلاة فقط صرف نماز کے شروع کرتےوقت رفع یدین کرنا

"'شحن ملقکہ کال : کال عنل اللہ تن ممغود: "لا اتیل بگُٹَلَاکارشول الو عَلَ ال عَلیْو ول كَعل کلم برغ تََمولأفأزلِ مز" 2 'حفرت علق شی ال تما لی عنہ سے مرو کی مےفر مایا ہعبدائل بن سودنے قر ایا ہکیائیں

للا نائج الأفکارفی تخریج أحادیث الأذکار, ج2 ص 21

جحفرت انل بی نج ررش ابشرعدرسے ردابیت ہف مایا:* اَل یم الگ صَلَللةُعَلَیِووَمَلّمٌ چیی قال: (غثر الَقشُوب عَلَیْيم وَلَا الطَالیی) رالغاضۃ: قال: "بی" یش تا ےوک ".(أمرجہ الحاکمفی المستدرک , ج2 ص 253رقم الحدیث ( 2913)

"من بیگک انہوں نے می اکم سی کے ساتھنماز یح ؛ج بآپ مایا نے (ظاو المفشوب لغ ولا ال الق) پڑ حاتد آش نکد ہتہآواز بش پڑعا ۔ اما حا رح ا علیہ کہا پہعدیٹ بای اوسسلم کی ش رکا بی گر دوٹوں نے ا کا اشراج نی سکیا۔ اور حاف شی رحمھ اللعلی نے بھی فیس می ںکہاکہبفاری ولرک شرط یکنا ہے۔

ا رجہ الٹرمذدی فی السٹن, باب وفع الو لڈ الگوعِ, رقم الحدیث( 267)وأبو داودفی السدن, باب مَن لم ڈگ الوفُع ِلد الگوعِ ررقم الحدیث(48 7), والنسائی فی السٹن , الژمحضۂ في زك ذُلِك , رقم الحدیث(1058), وفی السنن‌الکبری, ج 1 ص 2 رڈقم الحدیث ( 619), وابن ابی شییة فی مسندہ,ج 219, رقم الحدیث (323), وفی المصنف , ج1 ص 213رقم الحدیث(2441), وأحمدقی مسندہ-

أُربعین الطنفیۃ فی وصف 20 بعضافعالالصلاةۃ

سمہیں رسول الل لی الل تھا لی علیہ ےل مکی ما زط رج نماز نہ پڑھائوں؟ ت ھآپ نے نماز 2 و

وقال الترمنی: عییٹ ائی منخردِعریٹ عسَؿ.وَبوبَُولکَاوَاجیەن افلِ العل من آخخاب الئین 25 وَالگاپجدت . وو کول شَفُیان اللَُورق, َأَفلِالگوگة"۔

ا کیععاأات نے فر ایا :'' خپراڈرلن “ودک عد ہٹ+عد چنف>“ریرے۔ ى اکرمپلی ال علیہ ول ملم کےا کرام نشی نتم دزن نین میس ببت سےاہ لعل مکا بجی فرب ہے اود می ما مفیا نکی او رائ لکوفہکاقول ے'۔

الحدیث الثالث عشر-حدیث نمبر (13) "'وعن عاعغ بن کَلَبٰپ, عَنأي: "أَيَعََِا رطق ال4 عنۂ کان يَزكْغ 5نو آزلِ تَکُِرتَو می الضأج, نل یرژغ بعل“ ظا

نا حرقمالحدیث( 3681),ءو(0211), وابن المتذرفی الأوسطوالسنن, ج3 ص 119 حدیث (1392),والطحاوی فی شرحمعالی الآثار , ج1ص224,حدیث (1319)ءو (1350), وأبو یعلی فی مسندہ, ج8 ص 454.153 , حدیث(5040), وج9 ص 203, وحدیث( 5302), والبیهقی فی معرفة السٹن والآثار, ج2 ص 022 ,وفی السنن‌الکبری, ج2 ص 112۔

اما اقم ظاہرگی نے اک عد یگ ر- آآ نا ر 3ص6 ین سیعم اسدد ن ےکہا: اسنا دہع ۔( مندا ہیی امہ اجھ شاک اورناصرالد بن الال نے اس حد بی ٹکوئچکہا ام تی شقن مر خکربرہے 3 السا شقن ۷با ن)

ا أخرجە ابن أبی شیبةفی المصنف ,ج1 ص 213رقم الحدیث (2442),والطحاوی فی شرح‌معانی الآثار , ج1 ص 225رقم الحدیث (1353), و(1351), وفی شرح <

أُربعین الطنفیۃفی وصفا 21 بعضافعالالصلاةۃ تل ا اہ مسج یکریرمیس پاتھو ںکوبلن کر تے تے پھر دہ ا دہ ت )نیس ا ٹھاتے تھے وقال ابن جر: رجالہ ثقات'. الا عاذڈائان تج “اہ لعل نے فر مایا :اس کےد جا ل ٹہ ہیں۔

الحدیث الرابع عشر-حدیث نمبر( 14) عُگا تی (نآک.. کن عسی نی کتاش.خن عبيَعيبِ نار یزار ان قیال, ارام .ىر اش ود .کال: 'صليث مع خر کل تَركغ کہ کی من شلاو لا جبی الکعخ الطَلة' کال عبل اقعلكبِ: × وَرازۓ القّخیق . وَإزاوِیم . وبا شتاق . لا تَزُْوت أَيْيهم إلَا جن تَفْكِخُوت رت اسود سے مدکی مےفر ایا دش نے ححضرتجھرشھی انڈتھا لی حعنہ کےساتھ نما ادا کی ہو آپ نےنماز یسک لکھی ایس اُٹھاۓ سوائے اس وقت ج بآپ نےنماز شرو کی بد اللنک ن ےکھائگل نے شیھی ابا یم ائداساققکود یچھاءدہ بات بن یں کرت مگرجبپنمازٹرو کرت (تواتواٹھاتے تھے )"۔ وقال الطحأوی: وهو حدیث حیح"'۔ 6

-مشکلالاثار, ج 15 ص 33 34رقم الحدیث (68285)

تا لیر ایةفیتخریچاأحادیثالھدایة ج1 ص

اٹ اہن ابی شییةفی المصسف ,ج1 ص 214, رقم الحدیث( 4 245), وابن الملر فی الأوسط فی السنن والاجماع, ج 148۔119 ,حدیث( 1 139),والطحاوی فی شرح‌معانیالآثار, ج1 ص 227 حدیث(1364),وشر حمشکلالآثار, ج 15 ص 50) تا انظر:ش رحمعانیالاثار, ج1 ص 2927

أُربعین الطنفیۃفی وصف 22 بعضافعالالصلاةۃ ا ما مٹھا وکیا ےکہا: بعد بیٹ 7 ے۔ وقال اب جر:'وھڈا رجالەثعات" لت

حا ذطائن تر“ تھا فی داہن کہا :ال کرجا لق ہیں۔ ا کی سی ایک د او عبدالمنک ہے پیسید جن حیان جن اہر کے بٹے ہیں ۔ ای طرح 'تقریب انیب" قایس ہے ۔ا ہو اسحاقی وہر ین عبدان ھی ہیں عافاللر یٹ ہڈسلتالعنیان سے ہیں۔

الحدیث الخامس عشر-حدیث نمبر( 18) وضع الرکبتین قبل الیدین فی الا نحطاط الی السجود

(سجدنے میں جاتے ھوئےگھٹنوں کوھاتھوں سے پھلےرکھنا) غن وازلِ ٹن مث رگال: رٹ رشول الو لالإك عجَتَيَحَخْ ربِکیوکبْليََيْهِ رکاش یَيْكَبلزکبکید .5

تا الدرایقفی تخریج أحادیث امھدایة ج1 ص 152۔ ماما و بدائلہ ا خلطا تی عله نے اہ "شرحسننابن‌ماجہ"' شئر :''صحیح علی شرطمسلم"'

امام وش الزشنی مہ ےن ایا:'والعدیث ضجیخ لا تذارۂ لی لسن بن عَباشِ, وَهُ فلا خکنڈ, ذکر ذُلِك خی من وین لا الکھی''.(نصب الرایة, ج 605)

عأامہ بر المر بن تن عظہ ۓ زر با ی: ھذا حدیث صحیح نص عليه الطحاوي بقولەوھوحدیثٹ صحیح۔(نخب الأفکار جا ص 191) عئام مت زیرگ عطظاے تر ایا: '' ھذا السند صحیح علی شرط مسلم''۔(اتحاف السادة المتقین بشر ح أحیاءعلومالدین, 81) تا انظر:تقریب التھذیب,ص 294

اُمحرجہ الدرمدی فی السدن تاب ھا جاءفي وضع ال تن قب اليکَينِ في المُخجودٍ,رقم الحدیث (268), وأبو داود فی السدن باب گیف َضغ رَكْبتَندقَبلبدہ رقم الحدیث <

أُربعین الطنفیۃفی وصف ‏ 28 بعضافعالالصلاةۃ "رت وائل بن ری الیل تھائی عنہ ےہ ردکی سے ہرم یا :یس نے رسول ادص دیکھاء ج بآپ نے سحبد وکیاتوآپ نے دوفو ںکھشتو لکواتھوں سے پل رکھا اور جب أ یت پتھو ںکیھٹتوں سے پیا ٹیا" تا وقال الترمذی:والعتَل لو نل أکگر اق اللی۔

امام مہ کیھٹ ےکا کی ا لعلم اجب تی ے۔

الحدیث السادس عشر <-حدیث نمبر(16)

عَن آلیں بن مآلك رطی الله عنه ‏ گال: ”رَآَيّث ر؛ شول لاہ ول گر ای 077 کُ رگع حقی اشتقَز کُن تفص من وا بلتَکبیرعگی سَبِقَّت رکُبُکاه یََيْو"'۔ روہ الحاکم وقال: 0,17 00 الفَیْکن۔ زا آئرک فرڈود کو مفرارددزم+ 5

لا - والنسائی فی السٹن , باب أَوَلِ ھا َصِلُ لی الأّزضِ بن الإنسان فی سجودہ ,رقم الحدیث (1089) وتابٰ تل لین عَن الأرضِ قبل ال کین پرقم الحدیث(1151)ء وابن ماجہ فی السٹن اب الشُجودِ برقم الحدیث(682), والدارمی فی السدن ج2 ص 4,, رقم الحدیث( 1359), وابن المندرفی الأوسط , ج3ص 165, رقم الحدیث (1129), وابن خزیمتفی الصحیح, ج1 ص 319ہرقم الحدیث(629), وابن حبانفی الصحیح, ج5ص 1912(237) والآخرون۔

وقال الترمذی :مَذًا عدیث خسن غریب, لا تغِف أَعَذارواه غیز شریلؤ

وقال الحازمی فی الاعتبار في الناسخ والمدسوخ من الثار, ص 77:وَهوَعَلَی شُزْطِابي ڈاؤک واليِزمذی, والیْمائی"'

ا أحرجہ الحاکمفی المستدرک ,1ص 349,رقم الحدیث (822),والدارقطی فی السنن, ج2 ص 151-150 رقم الحدیث( 1308), والبیھقی فی السدنالکبری, ج 2-

أُربعین الطنفیۃ فی وصف - 24 بعضافعالالصلاةۃ رت اس بن ما لک رشی اللدتعائی عنم روکی یر ایا ٹس نے سو ان کوویھا آپ ےکم رکید دونوں انشھو لکو دوفو کا فو ل کے بر ابرکیاءچ رآ پ نے رو 7 0 رکھٹنہاتھوں سے پیل ر ! لت

ام حا لین فرباا :ٹین (یاری ول )کی شرط پر براسنا دک ہے ہیس اس می کی عل تکس جاتاءاو ین نے ال لکیہ می کی ء اور حافظ ھی دو نے امام عاگم علق یتقو لک برقراررکھاے۔

الحدیث السابع عشر-حدیث نمبر(17) وضع الوجہ بین الیدیں فی السجود (سجدے میں چھرەکودونوں ھاتھوں کے درمیاں‌رکھنا)

عق واؤلِ تی مث :ان ری رشول الو عَلٌ الله لیو وَسَلْم رَكَغ فََيّه جن کلف الَلاۃ وفیە بقاعت وت بی كَقَيْه" گا "رت وائل بن تج ررشی ا تواٹی عنہ سےخرد کی ےکآ نہوں نے رسول الل صلی مک دیکھا نما زٹںرٹل ہوۓ وقتآ پ ٣‏ این نے دونوں پاتھو کو ہلن رکیا۔ا درا ں حر یٹ

للا ص 143ہرقم الحدیث ([2632), والمقدسی فی الأحادیث المختارۃ ,ج6 ص 4, رقم الحدیٹ(2310)

ا أخرجہ مسلم فی الصحیح ہاب وطع دو الیقتی عَلَى اأیشری تغذ کی رۃالإخزام, رقم الحدیث (001), وأحمدفی مسندہ,ج 31ص 157, رقم الحدیث( 18866)ء وأبو عوانةفی المستخرج,ج 028 029, رقم الحدیث(1596),وابو لعیمفی المسند المستخرج , ج2 ص 24, رقم الحدیث (689), والبیھقی فی السننالکبری, ج 2323(13), و( 2515)), والآخرون۔

أُربعین الطنفیۃفی وصف ‏ 265 بعضافعالالصلاةۃ یس سے ج بآ پ اقم نے سجدہک یتو دوفو لاصھیلیوں کے درمیا نج دکیا"- الحدیث الثامن عشر-حدیث نمبر(18) غن آلياضتاق. قال: لُلّٹ للکدار نس غازب: ان کات لق عَل الله علیوِ لم يََغ وَجھَارِگ ٣ون‏ کقل: بلق کَلیو*× تا او اسحاتی سے م رد می ماف مایا:یش نے براء جن عاز ب نشی الشعنہ س ےکہا:نی اکم سأ جب جدہکر تو اپنے چر ےکوکہاں رکتے تھے؟ تو آپ شی انہر نے فرما یا وولو ںپتھیلیوں س ورمیان( رکھے ےجھے)'۔ ا ام7 زی عھایوےن, یا:' وف الجاب عق وازلِ ٹس تر وآل می ."عییگ الکزایھ حدیٹگ حسم کری"۔ اس ہاب مم رحضرت وائل بن تج راور اید شی اللر تھا تیم روئی ہے :او رتحضرت برا وش الع کی عد یٹس ناف یب ے'۔ الحدیث التاسع عشر-حدیث نمبر(19) تفریج الاصابع فی الرکوعوضمھافی السجود (رکوع میں انگلیوں کوکھلارکھنا اورسجدەانھیں ملانا) ن عَلَقمة اب واؤلِ, ن ابد اق الگ لی الله علیہ وَسَلَمَ ایاگ زع رح اا ع4 وا مصاع" ظا

تا رجہ العرمدی فی السٹن تاب ا جِاءأَْنََضغ الَجل ھا إِدا سجن رقم الحدیث (271), وابن ابی شییةفی المصنف, ج1 ص 233, رقم الحدیث (2665), وأبویعلیفی مسندہ, ج3 ص 232, حدیث ( 1669), والبغری فی شرح السدة ,ج3 ص 142ہرقم الحدیث( 618), والطوسی فی المستخر ج علی سننالدرمذدی, ج2 ص 130۔ 131۔ ا أمحرجہ ابن حبان فی الصحیح ,ج5 ص 247 248, رقم الحدیث (1920), والطبرانی فی المعجم الکبیر ج 22 ص 19 ہرقم الحدیث( 25), والدارقطشی فی السسن

أُربعین الطنفیۃ فی وصف 20 بعضافعالالصلاةۃ ''حضرت عق جن وائل اپنے واللد سے د وا ی کر تے ہی کہ بی اک رم مہا نے جب کو غکیاتوا پق الکو ںکوکھلا رکھاء اور جب حر ؛کیاتو انیو ںکوایا"_ لت قال الحافظ الھیھی: اداد صس. لگا حانڈٹی عو کہا کی سرن یں

الحدیث الاعشرون- حدیث نمبر(20)

هیئۃ القدمیر‌فی ‌الطوس

( بیٹھنے میں دو ٹوں قدموں کیھیثت) عق عَیْں اللو ي خُر رطی الله عنہبا قال: "من شُهَة الطَلاؤان تثوب اقم الَيْبّی, 1] الب لن وَالِل شقَل الْعری". ضرتگ بدا نع شی اڈ تھا تھا سے دی ہے بق مایا :دا میں ق کوک کنا ءال کی انیو ںیقی لی طر فکرا درا ئیں پا ول پر ٹیٹھناہخمازکی نت سےے'۔

الات ج2 ص 138 پرقم الحدیث(1283) والیھقی فی السٹنالکیری, ج2ص162ء رقم الحدیث (2695), ورواہ بعضھم بلفظ :ان اليَي گان إِذا سد ضم أَضابقة, فقط کما فی المستدرک للحاکم , ج1 ص 350, رقم الحدیث(626)ءوابن خزیمافی الصحیح, ج1ص324, رقم الحدیث (42 6) وقال الامام ابن الملقن فی ''البدر المنیر'ء ج 6868 :مَذًا الکدیثٹ ضجیح روا باللظِ الکڈگور الْعاكِم في ''شنکلرکہ عَلّی الفَجیعین", وائن حُزَیمَة ؤائن حبان فی ”ضجیجھما' وَالتتھقي فی "سنہ" َال العاکم: مد عدیث ضجیح عَلّ شر ط تسلمولہیخرجاۂ۔

آٹا انظر :مجمع‌الزوائدومبع‌الفوائد, ج2 ص 135۔

تا أعرجہ النسائی فی السن ‏ باب الاسوقبال پاطرافِ اضایع الم الفبلَ عِن الودِ للكَشَهدِہرقم الحدیث(1158), وفی السدن الکبریج 372,رقم الحدیث (48ء صرالد بنا لہائی نے سط ن سآ برا شش اد دای کوٹ تراردیاے ۔

أُربعین الطنفیۃفی وصف 27 بعضافعالالصلاةۃ الحدیث الحادی والعشروں-حدیث نمبر( 21) - ترک النَوَزل

ماک کڈ ڈک کنا[ یں سرین پرٹٹھنا ءاورہوفھ ں پا کوں دا میں جاحب کال دی ] "'عن ألی حمید الساعدی أُته ذ کر صلاۃ رسول الله صل الله عليه وسلم ق جمع من صحابة رسول اللە لا فققال: تم گَمَر مکل , تم کب ْقّھ ولئز یکوزكگ"'۔للا وقال این جر:ھذاحدیث‌صحیح". لت ضرت اتید سلعریی سےم روکی ہے ہأنہوں نے سو الہ تل کے سحا کی ایک اعت میس رسول اللہ ای کی ما زکاذکرکرتے ہونے خر مایا :جک رآ پ نےگمی ری میں سد ءکیاءئگ می کت ھکھڑے ہہویگے ءاورقو ری سکیا" ۔ ار ما|ڈْٹڑا مجر تل ےکہا: ابیعد ہے۔

الحدیث الثانی والعشرون-حدیث نمبر(22) حُن عبدالله ٹپ مر ری الله عدبما. گال :کت ین يَكیت ازم عَلَيَكيْواگا

الا أمحرجەأبو داودفی السنن تاب الیتا ح الشلاة ,رقم الحدیث(633), وتاب من ڈگز القوَرِك في الْرابمَق, رقم الحدیث (966), وابن حبان فی الصحیح, ج 181, رقم الحدیث ( 1866), والسراج فی مسندہ,ص55, رقم الحدیث(100), وفی حدیلہ ء,ج3ص) 7, رقم الحدیث( 1926), والطحاوی فی شرح معالی الاثار , ج4 ص 3565ء رقم الحدیث ( 310 1),وفی شرح مشکل الأثارء,ج 15ص 352, رقم الحدیث (6072), والبیھقی فی السنن‌الکبری, ج 2 ص 1106ء رقم الحدیٹ( 2612)

انظر : نتائج الألکارفی تخریجاأحادیث الأذکار, ج2 ص 132۔

شعیب الا رو ط نے" تین دا نا یہ تین می کہا :"إسدادەحسن"ل

أُربعین الطنفیۃفی وصفا 28 بعضافعالالصلاةۃ زس ق الطَلاؤ' ۔الاوقال اح کم:حدیث حیح عىی شرط الشیخین ولم بخرجاأہ. واقرہ الٹھی۔ 'طرتعپد ارب ن ررض الڈتھا تھا سے مر وی ےہ فرا پاا رو ل لٹا نے نماز یس(سہ سے کھرے ہوتے ہو پاتھوں پرکیک لگانے سے فرایا: امام ام ون ےکبا: بعد ہج نکاشرط پر سے ؛اورجین نے ا کہ رج نی سکی اورمافنزنڈی دطل ے ایکاٹ اآررھا-۔

الحدیث الثالث والعشرون-حدیث نمبر (24)

الفاظ التشعد۔(تشھدکےالفاظ)

رشول اللو صَل الله عَليو مل التَكَهُنَ گئ یئن تفَيْ گَمَایعَإیِی العُورَۃ من الْقرآن "الکَحِياٹُ لہ . والضٌآواث واكٍجاٹ . المَلھ علَیك ایا الک وَركتةُ اللو ویرگاثھ . المَلاۂ علَیکا وَعلى جباد الله الضالیین. اَخْنأنْلَل

سرک سے ور

الا للا وَاَفْيَلَأَيَكُمِنً عَبْنْهُوَنول×. 5

تا أحرجہ ؟بو داود فی السدن ,اب گراجوۃ الاغمَادِعَلَی اليد‌في الشَّلَاۃ ,رقم الحدیث (992), وابن خزیمةفی الصحیح ,ج1 ص 343, رقم الحدیث(692), والحاکمفی المستدرک , ج 353, رقم الحدیث( 837), والہیھقی فی السٹنالکبری, ج2 ص 4 رقم الحدیث( 2808), والبغوی فی شرحالسنة, ج 169حدیٹ( 611)

آا انظر : مستدرک للحاکم, ومعہ الطخیص للذھبی, ج1 ص 353۔

ٹا اُخرجہ البغاری فی الصحیح ,باب الأحل الین جزء 59, رقم الحدیث (6265), ومسلم فی الصحیح باب وع تد الیفٹی لی الیضری َعذ نكبیرةالإخزام, رقم الحدیث( 002), وابن أبی شیبافی المصف, ج 260 رقم الحدیث( 2986)

أُربعین الطنفیۃفی وصف 20 بعضافعالالصلاةۃ ' ع ہداللدی بر وائ حر مردی سے بفر مایا :ٹیس نےع ران وی ال تھی عنہ کوفرماتے ہو سناہرسول اللہ نے جج تشہد نو ںییم دبیہ جی ےپ شھت رآن مدکی ور تکیعیم دتنے تے اس رع کہ می رکا شیپ کے دوٹوں پاتھوں کے رمیا ن تیا کاٹ ریلو. وَالشَآواث وَاقلتٍجاث . الكل علیك أیچا ال ورك اللو و رگاٹھ , الملّ۸ۂ علیکا وقل چباد لڈو الضاایت أَمْيَدأنْلله لا الله وَأَهْهَنأيَ حُمنَا عبلوَرنو تا فو اك عیب عَ رسول اللەقلاة ف التَكَؤُں .وَلعمل عَليْوعئأٌکرافلِ الولور ِن اۓعاپ الگہني صَلی الله عَلَيه وَسَلَم, وٹ بَعُتَهُم من الگاپجین, فو کول فیا تارق وا المتارای وَأَختل يٍخحاق × ظا امام ت نکی عون ےکیا: بعد بی رسول الثم یق سےتشبد کے تلق روای کیاکی احادبیٹ یش سےا ہے۔ خیاکرم می کےھھا بادآ ن کے بعدتا تین بیس سے کر ایل کا بی نہب ہے۔ بجی سفیا لن تو ری این ایلرک ٠اد‏ اورا حا قکاقول ے- الحدیث الرابع والعشرون-حدیث نمبر( 24) الاشارہبالمسبحة۔ شعادتکی انگ یسےاشارەکرنا)

للا عوفی مسندہ,ج 216, رقم الحدیث (319)وأحمد فی مسندہ ج 50, رقم الحدیث (3935) ,والسراج فی حدیثہ, ج2 ص 177, رقم الحدیث (124), وأہو یعلی فی مسندہ, ج9 ص 236, رقم الحدیث( 5347),والطحاوی فی شرحمشکلالثار, ج ‏ ص 009, رقم الحدیث( 3197), وأبو عوانةفی المستخرج, ج 1ص511, رقم الحدیث (2026), وأبو نعیمفی المسند المستخرج, ج2 ص 26,رقم الحدیث() 69), والبیهقی فی السسن‌الکبری, ج2 ص 199 ,رقم الحدیث(2820)

لا انظر : السنن الدرمدی باب مَا ای الَشَقد تحت الرقم( 289)

اُریعیں الضفیة فی وصف ‏ 80 بعضافعالالصلاۃ

عق عَبّں الو بی الزکثر أَنة ذ کر 'نَ القٍی صَل الله عَلَيْهِ وَسَلمَ کان بُغیڑ وکا مَھا وَلَاهز کا تا ضر تچ بد انز بیررشی ایت تھا مدکی نر مایا :نی اک لی ارڈ تھا علیہ یلم جب ۂعاکر تقو الگی سے انشا وط مات ءاورا سے ا رافک تی وت تھا 7 وقال الامام النووی: روا أُبوداود ہآسناد حیح۔وقال ابن الملشن:ھذا ا حدیث صحیح۔ امام و کیٹ ےکیا: ا ما دا2 دن ےت سندر کے ساتعد ا سے روای تکیا۔ اور اہن میس دلاو ےکبا:یعد یشک ہے۔

الحدیث الخامس والعشرون-حدیث نمبر(25)

الاسراع فی القیامرالی الرکعة الثالئة

(تیسری رکعت کیطرف قیام میں جلدی‌طلدی‌کرنا)

کی کی الله ٹی توچ گال:علَّی شول للوصَلّ الله علَيدِوَسلَم الكَكَهَُ

ا أممرجہ أبو داودفی السدن ,اب الْإِشَاوۃفي الله رقم الحدیث (989), والنسائی فی السنن تاب ضط ائیشری عَلَى الكیق رقم الحدیث(1270),وفی السنن الکبری, ج2 ص 65, رقم الحدیث (4 119) وعبد الرزاق فی المصنف ,ج2 ص 2109, رقم الحدیث (3212), وأبو عونافی المستخرج ,ج1 ص 539, رقم الحدیث (2019)ء والطبرانی فی الاعاء ج1 ص 203, رقم الحدیث(638),وفی المعجم الکبیں ج13 ص 99 100, رقم الحدیث( 238), والبیھقی فی السٹن الکبری , ج2 ص 189, رقم الحدیث( 86 27), وابن عبد البر فی التمھید, ج 13 ص 195۔

ا انظر :المجموع شرح المھذب , ج 4034, وخلاصة الأحکام ,ج1 ص 1428ء والبدر المیر فی تخریج أحادیث الشرحالکبیں ج4 ص 11۔

أُریعیں الطنفیۃ فی وصف .31 بعضافعالالصلاۃ يٛٴ وَسَط السّلا وق را وفیه" ان ات وط یس تإسٌش چیں تَفاغٔ من تقَرد"'.اناوقال الافظ الھیشی :وَرَِالَه موَقُوت, تا 'حفرت عبدایڈد بن مسسودرشی اد تھا لی عنہ سے مردکی ہےانرما یا یسل الین نے شھے'' نماز کے درمیا ناو رنما زکےآخ ریسا تہ دالیم دی ۔اورعدیثڈیں ا" پچ گر نمازکا ورمیان یت اہو تو بیانبد سے فارغ ہوتے بی یکھر رے ہوجائے" نشی ولظٹ کہا :ال نال آزا تا 0 گے -

الحدیث السادس والعشرون*- حدیث نمبر(26) عن عزقة. أَقَ رضول الله َلٌّ الا عَلَيو سم کات لا تريدف لرّتعکش کی الک '. ان لوصده الھیڈ پت 5 ”ھا ئکشرصدایقہ ٹی اشعنبا سے مر دک ےکمدسول اللہ یه دورکعتوں می تشہد پر زی دی خی کرتے تھے عازط نی یلان اعد ی کی